in

انوکھی دیگ۔۔۔

ایک دفعہ ایک مست بابا ایک شہر میں آیا۔اس نے لو گوں سے کہاکہ جاو ایک بری دیگ لے کر آو ۔ دیگ آگیے ۔ اور کہا اس کء نیچے آگ لگا دو اور اس میں پانی چڑھا دو ۔ اگلے دن جب دیگ کا ڈکھن کھولا گیا تو دیگ چاولوں سے بری پری تھی ۔ اس نے کہا کہ پورے شہر میں اعلان کر دو کہ سب لو گ کھانا یہاں سے کھایا کریں ۔
دیکھتے ہی دیکھتے پو را شہر اامڈ آیا ۔ اور سب کو کھانا تقسیم کیا گیا ۔

 

 

اگلے دن جب پھر دیگ کھولی گیے تو وہ پھر جوں کی توں تھی ۔ سب بہت حیران ہو ئے ۔ پوری شہر میں مست بابا کا نام ہو گیا ۔ لو گ روز کھانا کھاتے اور چلے جاتے ۔ اس میں ایک فقیر بھی تھا جو روز آتا اور بغیر کھانا کھائے شام کو چلا جاتا ۔ ایک دن ایک آدمی ے کہاکی بابا تو نہ کھانا لیتا ہے اور نہ کو ئی بات کرتا ہے یہاں کرنے کیا آتا ہے ۔ اس نے کہا میں اس مست بابا کی زیارت کرنے آتا ہو ۔
جب اس کو مست بابا کے پاس لے جایا گیا ۔ تو مست نے پو چھا کہ بابا نہ تو کھانا لیتا ہے نہ کچھ کرتا پھر یہاں کھرا کیوں رہتا ہے ۔ بابا نے جواب دیا میں اس بندے کی زیارت کرنے کے لیے آیا ہوں جو آج کل پو رے شہر میں کھانا تقسیم کر کے خدا بنا ہو ا ہے۔ مست بابا کو اس بات کا بہت غصہ آیا اور اس نے اپنی چھڑی پکری اور شہر سے باہر نکل گیا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

9.ہر ایک چیز کی قیمت اس کی منڈی میں لگتی ہے۔

نور دین تم اب جو بھی کر لو ۔۔۔