in

رب کے غصے کو کیا چیز ٹھنڈا کرتی ہے ۔۔۔

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ایک نوجوان اپنی ماں کو لے کر بہت پریشان تھا ۔ اس کی ماں ہسپتال میں آخری سانسیں لے رہی تھی ڈاکٹر نے بھی نو جوان کو کہہ دیا تھا ۔ بری خبر کسی بھی وقت آسکتی ہے ۔ اپنآپ کو تیار رکھے ۔ ایک دن وہ صبح گھر سے ہسپتال کے لیے روانہ ہو ا۔ راستے میں پیٹرعل پمپ پر رکا گاڑی میں تیل ڈھلوانے کے لیے ۔اس نے دیکھا دور دیوار پر ایک بلی نے ڈبے کے نیچے بچے دیے ہو ے ہیںَ ۔
اور وہابی بہت چھوٹے ہیں ۔ نہ چل سکتے ہیں ۔

 

تو نوجوان کو ان پر برا ترس آیا اس نے اپنی گاڑی سائیڈ پر لگائی اور ساتھ والی شاپ سے کچھ مچھلی لے اور بلی کے بچوں کے آگے رکھ دی ۔ اور وہ کھانے لگ گئے ۔
بعد میں وہ ہسپتال کے لیے نکل گیا ۔ جب اس نے دیکھا کہ اس کی ماں بستر پر مو جود نہیں ہے اس نے آنکھیں بند کرلی اور برے وقت کو سمجھ لیا ۔ پریشان ہو گیا ، اس نے ایک نرس سے اپنی والدہ کے بارے میں پوچھا اور کہا کہ میری ماں کدھر ہیں ۔ نرس نے کہا کہ آج صبح ان کے حالت بہت اچھے سے بہتر ہو گئی ۔ تو ڈاکٹر نے کہا ان کو باہر کھلی جگہ پر لے جائیں ، وہ باہر بیٹھیں ہیں آپ انکو مل سکتے ہیں ۔ وہ باہر گیا ماں کو ملا اور اچھی حلت دیکھ کر بہت خوش ہوا ۔ اس کی ماں نے بتایا کہ آج میں نے خواب میں بلی کے بچوں کو اپنے لیے آسمان پر دعا مانگتے دیکھا ہے ۔ اور ساتھ ہی میرء آنکھ کھل گئی ۔
نوجوان بہت حیران ہو ا ایک پل میں اس کی نیکی کا صلہ بھی مل گیا ۔ تو جو اللہ پاک کی راہ میں اس کی چیزوں پر رحمت کرتا ہے ۔ اللہ اس پر اپنی رحمت دگنی کرتا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

’’چور چوری سے جائے ، ہیرا پھیری سے نہ جائے ‘‘

توہین عدالت ۔۔۔