in

پرانے لو گوں کا خلوص ۔۔۔۔

ہندوستان کے شہر دہلی میں جب ایک جیب کترا اپنے گرو کے پاس پہنچا تو ۔اس کے گرو نے کہا کہ کیا کما کر لائے ہو ۔ چیلے نے جواب دیا کہ گرو آج بہت لمبا ہاتھ مارا تھا ۔ ایک انگریز کا بٹوا نکالا تھا ۔ اور اس میں بہت سارے پیسے تھے ۔
لیکن میں نے وہ بٹوا اس کو واپس کر دیا ۔ گرو نے غصے سے پو چھاکہ ۔

 

تم نے اس کو بٹوا کیوں دیا ۔ تو چیلے نے کہا کہ جس کا میں نے بٹوا نکالا تھا ۔ وہ حضرت عیسی کا ماننے والا تھا ۔تو کہیں قیامت والے دن حضرت عیسی کہیں ہمارے نبی کو یہ تعنہ نہ مار دیں ۔ کہ تمہار ے امتی نے میرے امتی کی جیب کا ٹی تھی ۔ یہ سن کر وہ گرو رونے لگ گیا ۔اس نے کہا کہ تم نے بہت اچھا کیا کہ واپس کر دیا ۔ اس نے خود اس کو اپنی جیب سے دس روپے دیے ۔
جس زمانے کے مجرم ایسے تھے ۔ اس زمانے کے محرم کیسے ہو نگے ۔ اور جس زمانے کے محرم آپ اور میرے جیسے تھے ۔ تو اس علاقے کے مجرم کیسے ہو نگے ۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

نور دین تم اب جو بھی کر لو ۔۔۔

ایک گدھ اور شاہین ۔۔